Friday, January 27, 2017

تبت یدا ہوگئے

جو     فدا یانِ    راہِ      ہدا    ہو گئے
سارے   حق  ان  کے  مانو  ادا  ہوگئے

ہو کے  امی  بھی  وہ  رہ  نما  ہو  گئے
کشتیٔ     علم    کے   نا خدا   ہو   گئے

جو تھے دشمن کبھی میرے  سرکار کے
حسنِ   اخلاق    پر    وہ   فدا   ہو گئے

جب  سے رستہ ملا مصطفی کا مجھے  
کفر   کے   سارے   رستے  جدا   ہو گئے

اس کے بد بخت ہاتھوں کی گستاخیاں
تا  قیامت     وہ   تبت     یدا    ہو  گئے

 شاہِ   بطحا    کی   ہے  تربیت  یہ ظفؔر
ایک  ہی  صف  میں  شاہ  و گدا ہو گئے
Post a Comment