Saturday, November 5, 2016

پہلو میں کوئی دل ہے کہ پتھر ہی رکھا ہے

گو  اس  کے  ہر  اک وار  کا   انداز   جدا  ہے
ہر  وار   پہ   یکساں   ہی مگر  زخم  ہوا  ہے

اب دشمنوں  کی صف میں بھی آگے ہی کھڑا  ہے
وہ شخص جو میری ہی نوازش پہ پلا ہے

کس نام سے تجھ کو میں بھلا یاد کروں گا
تجھ  سے  تو  فقط  یار مجھے درد  ملا ہے

تنہائی  نے خاموش مزاجی بھی سکھا دی
یہ  شہرِ خموشاں  مجھے  اپنا  ہی  لگا ہے

کہتا تھا مجھے وہ کہ بہت بولتا ہوں میں
اب  خامشی بھی اس کے لئے ایک سزا ہے

ہم  راز  مرے  چند منافق  بھی  ہوئے ہیں
ان  ہی کے  فریبوں نے مجھے  زیر کیا  ہے

مجھ کو ہے یقیں اس کو ندامت ہی ملے گی
جو طیش میں آکر کے جدا مجھ سے ہوا ہے

زخموں  پہ مرے تیری یہ مسکان ہے کیسی
پہلو میں کوئی دل ہے کہ پتھر ہی رکھا ہے

سچ   بولنا  تو   آج   ظفؔر  جرم   ہے   گویا
 کل تک جو فدا تھا وہی اب مجھ سے خفا ہے



Post a Comment