Wednesday, September 7, 2016

کہ درد و میر کا غالب کا ہم زباں ہوں میں



3 ستمبر 2016  کو منعقد "موجِ سخن" فیس بک گروپ کے 150 ویں فی البدیہہ عالمی طرحی مشاعرہ میں لکھی گئی غزل۔

مصرعِ طرح:  تری نگاہ سے لیکن ابھی نہاں ہوں میں....  (عبد الحمید عدؔم)



میں خود میں گم ہوں کہیں آج لا مکاں ہوں میں
مجھے خبر  ہی نہیں ہے  کہ اب   کہاں  ہوں  میں

خوشی کی جستجو میں تو مجھی سے روٹھا ہے
 سکون  میں  ہوں ترا سن کہ  جانِ جاں ہوں میں

میں    تم    پہ   اور   بھلا   کیسے  اعتبار   کروں
مری   نظر   سے  گرے   ہو  کہ بد  گماں ہوں میں

مجھے   تو  ناز  ہے  اردو  کا  میں بھی طالب ہوں
کہ  درؔد  و میؔر  کا   غالؔب   کا  ہم  زباں ہوں  میں

امیرِ    شہر    کی    معصو میت   پہ    مت  جانا
انہی  کے    ظلم  کی  اک  تازہ  داستاں  ہوں میں

وہ   پوچھتے   ہیں  مرا   مسلک  آخرش  کیا  ہے؟ 
 انہیں  کوئی  تو    کہے  ایک   مسلماں  ہوں میں

گناہ    کر    کے   تری   رحمتوں  کا     طالب  ہوں
نہ  ہو   اگر   تری  بخشش  تو  رائیگاں ہوں  میں

قدم   قدم   پہ ہیں  در  پیش  نت    نئے   طوفاں
بھنور   کے  بیچ   ظفؔر   زیرِ  امتحاں   ہوں   میں

ظفؔر شیر شاہ آبادی
کٹیہار، ہندوستان 🇮🇳
;

۞۞۞
LIKE& SHARE it on Facebook
۞۞۞
Follow me on Facebook
آپ کی رائے جان کر ہمیں خوشی ہوگی
Post a Comment