Friday, August 12, 2016

کون کہتا ہے کہ آزاد ہوں میں؟

*یوم آزادی اور ہند کی موجودہ صورت حال کے تناظر میں ایک تازہ ترین غزل*



اب     فقط    نام    کو    آباد      ہوں    میں
ہاں    یہی    سچ    ہے  کہ   برباد  ہوں   میں

قتل    و خوں   عام   ہے   دہشت   ہے    یہاں
کون    کہتا    ہے     کہ     آزاد     ہوں    میں

میں    ہی     معمارِ     وطن      ہوں     لیکن
وائے    ناکامی    کہ     برباد      ہوں     میں

ہے   مجھے   جان    سے   پیاری   یہ    زمیں
 اک    اسی    بات    پہ     آباد    ہوں    میں

 نہیں    کچھ     بیر     وطن     سے    لیکن
 ترے    انصاف    سے    ناشاد    ہوں    میں

تو     مرے     عزم     کو    کیا    توڑے   گا
کام     آساں  نہیں      فولاد     ہوں     میں

تم     بس     اک    حرفِ     تمنا     تو   کہو
نہر     لے     آؤں   گا     فرہاد     ہوں    میں

آنکھ    میں    اب    یہ    نمی   کیسی   ہے
کیا    تمہیں    آج    تلک    یاد    ہوں   میں

جال   میں    اپنے   ہی   پھنسنا   نہ  کہیں
تجھ  سے کچھ  کم  نہیں صیاد  ہوں  میں

سچ   کو  میں سچ  ہی لکھوں گا   اے  ظفؔر
سوچ     آزاد     ہے      آزاد      ہوں     میں




۞۞۞
LIKE& SHARE it on Facebook
۞۞۞
Follow me on Facebook
آپ کی رائے جان کر ہمیں خوشی ہوگی
Post a Comment