Saturday, July 23, 2016

میں حمد کیا بیاں کروں گناہ گار ہوں بہت



تو   خالقِ  حیات   ہے   بَلند  تیری  ذات  ہے
ترے  وجود  پر  گواہ   ساری   کائنا ت   ہے
                            میں حمد کیا بیاں کروں گناہ گار ہوں بہت

رؤوف  تو رحیم   تو،  غفور    تو   حلیم تو 
ہے صاحبِ جلال   تو،  حکیم   تو  علیم  تو
                         سعادتوں کا  نور  دے   سیاہ  کار  ہوں  بہت

تری  قضا  پہ  منحصر   امورِ  کا ئنا ت  ہیں
ہماری کیا بساط  ہے کہ  ہم تو بے ثبات  ہیں
                       تو ہی عزیز کر مجھے ذلیل و خوار ہوں بہت

تری عطا ہے زندگی تجھی سے کتنا دور ہوں
ملی ہیں تیری نعمتیں تومیں نشےسےچورہوں
                    گناہ میرے بخش دے میں اشک بار ہوں بہت

کتا بِ زند گی مر ی   گنا ہ   کی  کتا ب  ہے
جو نیکی ظاہرا بهی ہے وہ خواب ہے سراب ہے
                  تو میرے دل کو صاف کر میں داغ دارہوں بہت

مری   ہے  ایک  التجا  الہی  تو   قبول  کر
ظفر  کو  باغ خلد میں   مرافقِ  رسول   کر
                  قبولیت  کا شرف  دے  کہ خاک سار  ہوں بہت



۞۞۞
LIKE& SHARE it on Facebook
۞۞۞
Follow me on Facebook
آپ کی رائے جان کر ہمیں خوشی ہوگی
Post a Comment