Sunday, September 6, 2015

طرحی غزل: اور بھی غم ہیں دل جلانے کو


غزل
ہمارے ایک دوست کی واٹس ایپ پر شعری مجلس ہے۔ اسی گروپ میں آج مورخہ 6 ستمبر 2015 کو ایک فی البدیہہ طرحی مشاعرے کا انعقاد ہوا۔مرزا غالب کے شعر "یاالہی یہ ماجرا کیا ہے" پر شعراء نے اپنا کلام پیش کیا۔ میں نے بھی طبع آزمائی کی۔ بس اسی کو آپ کی خدمت میں پیش کرتا ہوں:



یار       میرے     یہ    ماجرا     کیا        ہے
دل   کی    دھڑکن سے   یہ  صدا   کیا      ہے

  دور  ہوں   پھر  بھی   تو   نظر   میں   ہے
میری   نظروں   کو   یہ ہُوا   کیا  ہے

 تیری   یادوں   نے   جب   بھی   چھیڑا  ہے
میرے  احساس   کو    چھُوا                     کیا   ہے

 تونے نظروں سے کر دیا  گھائل
اب   مرا    حال     پوچھتا                 کیا     ہے

اور  بھی  غم   ہیں   دل جلانے   کو
اب  ظفر عشق  میں  رکھا  کیا  ہے

Post a Comment